تپ دق

تپ دق (ٹی بی) ٹیوبر کلوسس بیکٹیریا مائکوبیکٹیریم ٹیوبر کلوسس کے ذریعہ پیدا ہونے والی ایک بیماری ہے۔ اعلی آمدنی والے ممالک کے مقابلہ میں کم اور درمیانی آمدنی والے ممالک میں TB زیادہ رائج ہے۔

TB دنیا کے ہر حصے میں موجود ہے۔ تاہم، 2014 میں، ٹی بی کے معاملات کی سب سے بڑی تعداد جنوب مشرقی ایشیا اور افریقہ میں موجود تھی۔ بیماری کے سب سے زیادہ بوجھ سے متاثر چھ ممالک تھے، بھارت،پاکستان، انڈونیشیا، چین، نائیجریا، اور جنوبی افریقہ۔

علامات

فعال تپ دق کے انفیکشن کی علامات میں کئی ہفتوں تک رہنے والی کھانسی، لعاب دار یا خون والی کھانسی (بلغم)، بخار، رات کو پسینہ آنا، بخار، اور سینہ میں درد شامل ہیں۔

کچھ لوگ علامات کے ظاہر ہوئے بغیر تپ دق سے متاثر ہو سکتے ہیں۔ اسے پوشیدہ تپ دق کہا جاتا ہے۔ پوشیدہ تپ دق فعال بیماری کا باعث بن سکتا ہے۔ پوشیدہ تپ دق سے متاثر کچھ لوگ کبھی بیمار نہیں پڑتے ہیں۔

ترسیل

تپ دق کے بیکٹیریا متاثرہ سانس کے قطروں کے ذریعے پھیلتے ہیں، جیسے کہ وہ بیماری میں مبتلا لوگوں کے کھانسنے یا چھینکنے، یا یہاں تک کہ بات کرنے پر پیدا ہوتے ہیں۔ ایک غیر متاثر شخص متاثرہ بوندوں کو سونگھر کر اپنے پھیپھڑوں میں لے سکتا/سکتی ہے اور متاثر ہو سکتا/سکتی ہے۔

پوشیدہ تپ دق کے انفیکشنز سے متاثر لوگ اپنے آس پاس موجود لوگوں میں تپ دق کے بیکٹیریا نہیں پھیلاتے ہیں۔

علاج اور دیکھ بھال

تپ دق کے زیادہ تر معاملات کا کامیابی سے علاج کیا جا سکتا ہے۔ فعال تپ دق سے متاثر لوگوں کا علاج اینٹی بایوٹکس اور دیگر ادویات کے ساتھ کیا جاتا ہے جو تپ دق کے بیکٹیریا کو ہلاک یا کنٹرول کرتے ہیں۔ علاج عام طور پر کئی ماہ تک جاری رہتا ہے۔

پوشیدہ تپ دق سے متاثر لوگوں کا علاج اس بات کو یقینی بنانے کے لئے اینٹی بایوٹکس کے ساتھ کیا جا سکتا ہے کہ وہ بعد میں فعال تپ دق سے بیمار نہ پڑیں۔

حالیہ برسوں میں، تپ دق کے کچھ اسٹرینس اینٹی بایوٹکس کے خلاف مدافعتی بن گئے ہیں۔ اسے ملٹی-ڈرگ-ریززٹینٹ ٹی بی (MDR-TB) کہا جاتا ہے۔ MDR-TB کا بنیادی سبب مناسب علاج کی کمی یا TB کی ادویات کا غلط استعمال،یا ناقص معیار یا ادویات کا استعمال ہے جن کی مدت ختم ہو چکی ہے۔ ان معاملات کا علاج مزید مشکل اور مہنگا ہوتا ہے، اور علاج کے سنگین ضمنی اثرات ہو سکتے ہیں۔ چونکہ ڈرگ-ریززٹینٹ ٹیوبر کلوسس کا علاج انتہائی مشکل ہے، لہٰذا صورت حال کی روک تھام اہم ہے۔ 2014 میں، تقریبا 480,000 لوگوں میں MDR-TB پایا گیا تھا۔ روک تھام کے اقدامات میں یہ یقینی بنانا کہ تپ دق سے متاثر لوگ تجویز کردہ تمام ادویات لیں اور انہیں درست ادویات کے ساتھ علاج مہیا کیا جانا شامل ہے۔

پیچیدگیاں اور اموات

اگرچہ تپ دق کے انفیکشن کا ذریعہ سانس ہے، اور اس کی اہم علامات عام طور پر سانس سے متعلق ہیں، تپ دق کے بیکٹیریا جسم کے دوسرے حصوں میں پھیل سکتے ہیں اور انہیں متاثر کر سکتے ہیں، جیسے کہ ہڈیاں اور دماغ۔

علاج نہ کئے جانے والے فعال تپ دق کے مرض مہلک ہو سکتے ہیں۔ HIV (ہیومن امیونو ڈیفیشینسی وائرس) پوزیٹیو لوگوں کا TB ایک معروف قاتل ہے 2015 میں 3 میں 1 HIV-سے متعلق اموات کا سبب TB تھی۔ فعال TB اور HIV انفیکشن سے متاثر تقریبا %18 لوگ ہلاک ہو سکتے ہیں۔

بہت چھوٹے بچوں کے لئے بھی فعال TB انفیکشن زیادہ مہلک ہے۔ انہیں TB کی وجہ سے سنگین پیچیدگیوں کی زد میں آنے کا زیادہ امکان ہے جیسے کہ TB میننجائٹس (دماغ کے ارد گرد کے لائننگ کا انفیکشن)۔ 2014 میں تقریبا  140,000بچوں کو شامل کرتے ہوئے، تقریبا 1.5 ملین لوگ تپ دق کے سبب ہلاک ہوئے تھے۔ دنیا کی تقریبا ایک تہائی آبادی کو پوشیدہ تپ دق ہے۔

دستیاب ویکسین اور ویکسینیشن کی مہمات

bacille Calmette–Guérin (BCG) ویکسین کو TB کے بہت سے معاملات والے ممالک میں قومی ویکسینیشن پروگرام کے حصے کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ ویکسین TB بیکٹیریا کی وجہ سے پلمونری بیماری سے بچوں کی مکمل طور پر حفاظت نہیں کرتا، نہ ہی یہ فعال بیماری میں فروغ حاصل کرنے سے پوشیدہ TB کے انفکیشن کی روک تھام کرتا ہے۔ تاہم، یہ بچوں میں کچھ سنگین TB کی پیچیدگیوں کو روک تھام کرتا ہے، جیسے کہ TB میننجائٹس جو کہ مہلک ہو سکتا ہے۔ ویکسین کو عام طور پر بالغوں میں استعمال نہیں کیا جاتا، اور بچوں میں ویکسین بیماری کے پھیلاؤ کی روک تھام نہیں کرتی ہے۔

BCG ویکسین کو 1921 کے بعد سے استعمال کیا جا رہا ہے۔ بہت سے محققین ایک زیادہ مؤثر تپ دق ویکسین (ٹیوبر کلوسس) تیار کرنے کے لئے کام کر رہے ہیں۔ امید اس ویکسین کو تیار کرنے کی ہے جو کہ تپ دق سے ہونے والے انفیکشن کی روک تھام کر سکے، جس سے عالمی سطح پر بیماری کا عظیم بوجھ کم ہو جائے اور TB کے بیکٹیریا کی ترسیل بھی کم ہو جائے۔

 

ویکسینیشن کی سفارشات

TB کے بہت سارے معاملات والے ممالک میں، شیرخوار بچوں کو پیدا ہونے کے کچھ وقت بعد ہی BCG ویکسین دے دیا جاتا ہے۔

TB کے کچھ ہی معاملات والے ممالک میں، شیر خوار بچوں کے TB کی زد میں آنے کا امکان ہونے پر انہیں ویکسین لینے کا مشورہ دیا جا سکتا ہے، جیسے کہ اس گھر میں رہنا جہاں فعال TB کے انفیکشن سے متاثر کوئی بالغ موجود ہو۔


وسائل:

بیماریوں کے کنٹرول اور روک تھام کے مراکز۔ Basic TB facts. 20/3/2017 کو رسائی کی گئی۔

Straetemans M, Glaziou P, Bierrenbach AL, Sismanidis C, & van der Werf MJ. Assessing tuberculosis case fatality ratio: a meta-analysis. PLoS One, 2011;6(6), e20755.

عالمی ادارہ صحت۔ Position paper on BCG vaccine. 20/3/2017 کو رسائی کی گئی۔

عالمی ادارہ صحت۔ Revised BCG vaccination guidelines for infants at risk for HIV infection. 20/3/2017 کو رسائی کی گئی۔

عالمی ادارہ صحت۔ Tuberculosis fact sheet. 20/3/2017 کو رسائی کی گئی۔

عالمی ادارہ صحت۔ Tuberculosis vaccine development. 20/3/2017 کو رسائی کی گئی۔

PDFs کو پڑھنے کے لئے Adobe Readerکو ڈاؤن لوڈ اور انسٹال کریں۔

 

گزشتہ اپ ڈیٹ 20 مارچ 2017